احتساب کاجھوٹا دعویٰ

آخرکارسچ سامنے آہی گیا،جیسا کہ میں نےاپنے آرٹیکل “خروں کی پارلمینٹ” میں بیان کیا تھا۔ گزشتہ ٹی وی پروگرام میں ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان کےگیلانی نے اس بات کی تصدیق کردی ہے کہ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان نےمسلم لیگ ن کو کوئی سرٹیفکٹ جاری نہیں کیا، نہ صرف یہ بلکہ اس نے ریپڈ بس سروس کےمنصوبے پر دوکنڑیکٹ کےمعاملے پرغلط بیانی پراپنےتحفظا ت کااظہارکیا تھا افتخار گیلانی صاحب نے اس بات کی بھی وضاحت کی کہ پاکستان مسلم لیگ ن اس بات کا پروپیگنڈا نہ کریں کہ اس کوٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان کی طرف سے کوئی سرٹیفکیٹ جاری ہواہے۔ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پا کستان نہ تو کوئی ایسا سرٹیفکیٹ جاری کرتی ہے نہ اس نے ایساکوئی سرٹیفکیٹ جاری کیاہے۔

میں نے ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان سے گزارش کی ہے کہ وہ اپنے لیٹرکو جو کہ پاکستان مسلم لیگ ن کو ریپڈ بس سروس کےمنصوبے پرلکھا گیا ہے پبلک ڈومین میں جاری کرے تاکہ پاکستان مسلم لیگ ن کے بے بنیاد پروپیگنڈے کا قلع قمہ ہوسکے۔ نہ صرف وہ لیٹرجودو پروجیکٹس پراعتراض پرمبنی ہے بلکہ یہ وضاحت بھی کرے کہ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان نےمسلم لیگ ن کے کسی بھی منصوبے کا نہ صرف کوئی آڈٹ کیا ہے نہ وہ اس طرح کے کسی آڈٹ کی صلاحیت یا حق رکھتے ہیں۔ افسوس اس بات کا ہے کہ مسلم لیگ ن کی قیادت پاکستانی عوام کو جان بوجھ کرمس لیڈ کرتی ہے۔

ادھرمیں آرٹیکل لکھ رہا ہوں ادھرٹی وی پرمسلم لیگ ن کے لیڈرنواز شریف صاحب پاکستانی عوام کو بتارہے ہیں کے کس طرح ان کی حکومت نے ناصرف لاہور سے اسلام آباد بلکہ اسلام آباد سے پشاور تک کا موٹروے تعمیر کیا۔ میرے کان اس دعوے کو سن سن کرتھک چکے ہیں مگر شرم کی بات یہ ہے کہ پاکستان کی میڈیا یہ حقیقت جانتے ہوئے بھی اپنے ناظرین اورریڈرز کو نہیں بتاتےکہ لاہور سے اسلام آباد تک موٹروے ایم 2 نہ صرف مسلم لیگ ن کے دور میں نہیں بنا بلکہ مسلم لیگ ن اور پی پی پی کی دو دفعہ حکومتوں کے دوران اس منصوبے کو کئی مرتبہ کینسل کیا گیا اورنئے کنٹریکٹ سائن کئے گئےجن سے پاکستان کے خزانے کو بےبہا نقصان پہنچا۔

جہاں تک اسلام آباد سے پشاور تک کا موٹروے کی تعمیرکا تعلق ہے تواس کی تعمیر توزیادہ ترمشرف کے دور میں مکمل ہوئی۔ آپ کی اطلا ع کے لیےعرض ہے کہ ایم ون 2003 میں شروع ہوا اور 2007 میں مکمل ہوا۔ اس دوران ن لیگ کی حکومت نہیں تھی مگر ان سب حقائق سے میاں صاحب کو کیا مطلب، ان کو تو عوام کی سادگی اورلاعلمی سے فائدہ اٹھانےکا جنون ہے۔ ایم 2 جس کا کریڈٹ مسلم لیگ ن لیتی ہے، وہ نومبر 1992 میں شروع ہوا اورنومبر 1997 میں مکمل ہوا جبکہ نوازشریف کی دو سابقہ حکومتوں کے دورانیہ نومبر 1990 سے جولائی 1993 اور فروری 1997 سے 12 اکتوبر 1999 تک کا تھا۔ان حقائق کی بنیاد پریہ کہا جاسکتا ہے کہ ا یم2 کی تعمیر میں مسلم لیگ ن کا حصہ بہت تھوڑا تھا۔ ایم 2 کے شروع ہونے کے صرف 9 مہینے کے بعد مسلم لیگ کی حکومت ختم ہوگئی۔ پھراس کے دوسرے دور میں اس پروجیکٹ کے صرف 11 مہینے باقی تھے۔ اس پروجیکٹ کے 5 سال میں سے20 مہینے کےعرصے کے لیے مسلم لیگ کی حکومت تھی۔

اس دفعہ میاں صاحب صرف ان دومنصوبوں کےغلط کریڈٹ پراکتفا کرنے پرکسی طرح سے بھی تیارنہیں، وہ اب لاہور سے کراچی کے موٹروے کا کریڈٹ بھی لینا چاہتے ہیں، میاں صاحب آپ کی اطلاع کے لیےعرض ہے کہ لاہور سے کراچی تک موٹروے کا منصوبہ آپ کے مخالف جنرل مشرف صاحب کا منصوبہ ہے جس پرسب سے زیادہ کام پی پی پی کی حالیہ حکومت کے دوران ہوا ہے۔ اس منصوبے کے تحت لاہور سے فیصل آباد تک ایم 3 مکمل ہوچکا ہے اورفیصل آباد سے ملتان تک ایم 4 پر کام جاری ہےاوریہ تکمیل کے قریب ہے۔ دوسری طرف سے کراچی سے حیدرآباد کے لیے ایم 9 کا کام پی پی پی کے دورمیں شروع ہوا ۔ گوادر سے نوڈیرو تک ایم 8 بھی مشر ف کے دور میں مکمل ہوچکا ہے۔ جب کہ ایم 7 جو کہ کراچی سے دادو تک ہے اس پرکام جاری ہے۔

میاں صاحب ہمیں صرف اتنا بتادیں کہ آپ نےاتنے سارے موٹرویز ان 20 مہینوں میں کس طرح کمپلیٹ کیے؟ آخر دروغ گوئی کی بھی کوئی حد ہوتی ہے، کیا آپ نے ہم سب کواتنا ہی بے وقوف سمجھ رکھا ہے؟ پاکستانیوں کے لیے سوچنے کا مقام ہےکہ ان سب دعوؤں کے جواب میں پاکستان کا میڈیا کیوں خاموش رہتا ہے، وہ کیوں عوام کو حقیقت سے آگاہ نہیں کرتا؟

دوسری طرف خبرآئی ہے کہ شیخ وقاص کا یہ جھوٹ بھی عیاں ہوگیا ہے کہ اس نے اے لیول کیا تھا۔ جیسا کے میں نے پہلےلکھا تھا دوغلاپن کھل کے سامنے آرہا ہے۔ مسلم لیگ ن کی قیادت اس طرح کے لوگوں کواپنی پارٹی میں شامل کرکے اپنے مستقبل کو خود ہی تاریک بنا رہی ہے۔ مسلم لیگ ن خواجہ سعد رفیق کی صورت میں دنیا کے سب سے خوش قسمت انسان سے پہلے ہی سرخروتھی،اس کے پاس ایک فنانس منسٹرکی صورت میں ایک ایسا بندہ موجود ہے جس نے پچھلے کئی سالوں میں صرف پی نٹس کے برابر ٹیکس دیا مگراس کے باوجود اربوں روپوں کی جائیداداکٹھی کرلی۔ اب مسلم لیگ کے پاس ایک ایسا تعلیم کا منسٹر بھی ہے جس نے بغیرانٹریا اس کے برابرامتحان پاس کئے ڈگری حاصل کرلی ہے، نہ صرف یہ کہ وہ جھوٹا ثابت ہوچکا ہے بلکہ ڈھیٹ بھی کیوں کے بجائےشرمندہ ہونے کے وہ اپنی بات کو سچ ثابت کرنے پرتلے ہوئے ہیں۔

نوازشریف نے ایک بیان عدلیہ کے لیے بھی دیا ہےجس میں انہوں نےعدلیہ کے فیصلوں پہ عمل نہ ہونے کا رونا رویا ہے۔ ہماری میاں صاحب سے صرف اتنی گزارش ہے کہ آپ کوتو پاکستان کی عدلیہ کا شکرگزار ہونا چاہیے، الیکشن توایک طرف آپ کوتواوربہت سی مشکلیں پیش آتیں آخرآپ کا اور آپکے بھائی شہباز شریف کا تو کام ہی اسٹے آرڈرزپرچل رہا ہے۔ دوسری طرف آپ ایئرمارشل اصغرخان کے کیس کو کیوں بھول رہے ہیں؟ اور وہ جومنی لانڈرنگ کا کیس ہے، وہ کیا آپ کو یاد نہیں ؟ میاں صاحب حقیقت تو یہ ہے کہ عدلیہ کی نوازشوں کےسب سے بڑے بینی فشری آپ خود ہیں۔ کاش آپ یوکے مہمان بن کےآنےکے بجائے یہاں رہ کرایسی حرکتیں کرتے توآپ کو لگ پتا جانا تھا۔ پھرمعاملہ خارجہ سیکرٹری کے بجائے قانون کے ہاتھ میں ہوتا۔

بات جب میاں صاحب کی چلی ہے تو ان کی برٹش خارجہ سیکرٹری سے ملاقات کا ذکر کرنا ناانصافی ہوگی، پتا چلا ہے کہ میاں صاحب کو لندن کی یاتراکیلئےطلب کیا گیا تھاجس کو انہوں نے سرآنکھوں پرپورا کیا،اطلاعات کےمطابق برطانیہ کی جانب سے انہیں مشرف کی پاکستان آمد کےبارے میں اطلاع دی اورانہیں یاد دہانی کرائی کہ جس طرح مشرف نےاچھے بچوں کی طرح میاں صاحب اوربے نظیرکو پاکستان آنے دیااب میاں صاحب بھی اچھے بچوں کی طرح مشرف کے راستے میں روڑے نہ اٹکائیں۔

اس موقع پرپریس کانفرنس کے دوران میاں صاحب کےاس بیان کا ذکرنہ کرنا بھی ذیادتی ہوگی کہ پاکستان کوان جیسے تجربہ کارسیاستدانوں کی ضرورت ہے جوکہ تبدیلی کا نعرہ لگانے کے بجائےڈلیورکرسکیں۔ میاں صاحب پی پی پی بھی تواسی طرح کی ڈیل اوربیرونی مداخلتوں کےنتیجے میں اقتدار میں آئی تھی جس کا نتیجہ ہم سب کے سامنے ہے۔ اب اگر پاکستانی قوم یہ غلطی پھرکرےگی تومیری بات کو یاد رکھے، اس بار فوج کوآنے سے کوئی نہیں روک سکتا

http://urdu.thenewstribe.com/blogs/2013/03/28/accountabilitys-falls-claim/

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s